ایکواڈور لندن میں ٹیلی کانفرنسگ کے ذریعے مجھے امریکا کے حوالے کرنا چاہتا ہے جولین اسانج

ایکواڈور لندن میں ٹیلی کانفرنسگ کے ذریعے مجھے امریکا کے حوالے کرنا چاہتا ہے جولین اسانج

وکی لیکس کے بانی جولین اسانج نے دعوی کیا کہ ایکواڈور کی حکومت انہیں امریکا کے حوالے کرنا چاہتی ہے۔عالمی ذرائع ابلاغ کے مطابق وکی لیکس کے بانی جولین اسانج نے 2012 ء میں لندن واقع ایکواڈور کے سفارت خانے میں پناہ لی تھی۔انہوں نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ایکواڈور ان کی پناہ پر پابندی لگا کر ان کوامریکا کے حوالہ کرنا چاہتا ہے۔انہوں نے ایکواڈور پر الزام لگایا کہ ایکواڈور حکومت ان کو قید تنہائی میں رکھے ہوئے ہے۔ انہوں نے اپنے آزادی کے بنیادی حق کی خلاف ورزی کرنے پرایکواڈور کی حکومت کو عدالت میں چیلنج کرنے کی بھی دھمکی دی تھی۔ جولین اسانج کا کہنا ہے اسانج کو ان کے وکلاء سے بھی نہیں ملنے نہیں دیا جا رہا ہے۔دوسری جانب ایکواڈور کے سفارت خانہ نے جولین اسانج کے اس دعوے پر کچھ بھی کہنے سے انکار کر دیا ہے۔واضح رہے کہ جولین اسانج نے عراق اور افغانستان جنگ کی خفیہ امریکی فوجی دستاویزات جاری کی تھیں۔

You might also like

Comments are closed.